ہوا کا معیار جنوری سے صحت مند ریکارڈ کیا گیا

پاکستان انوائرمنٹل پروٹیکشن ایجنسی (پاک-ای پی اے) کی ڈائریکٹر جنرل فرزانہ الطاف شاہ نے پیر کو سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے موسمیاتی تبدیلی کو بتایا کہ وفاقی دارالحکومت میں فضائی آلودگی کا تناسب جنوری سے قومی ماحولیاتی معیار کے معیارات (این ای کیو ایس) کی جائز حد سے کم شمار کیا جاتا ہے۔ کمیٹی کا اجلاس سینیٹر محمد ہمایوں مہمند کی صدارت میں ہوا۔

انہوں نے فورم کو آگاہ کیا کہ ذرات کا سب سے مؤثر آلودگی (PM2.5) 17.5 مائیکرو گرام فی مکعب میٹر ریکارڈ کیا گیا جو کہ 35 مائیکرو گرام فی مکعب میٹر NEQS سے بہت کم ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ وفاقی دارالحکومت میں آلودگی کے دو اہم ذرائع ہیں ، صنعتی شعبے کا اخراج اور فضلہ جلانا۔

انہوں نے کہا ، "سیکٹر I-9 کے صنعتی علاقے میں آٹھ سٹیل کی بھٹییں ہیں جنہوں نے دھواں دھواں کم کرنے کے لیے خشک جھاڑیاں لگائی ہیں۔” ای پی اے کے ڈی جی نے مزید بتایا کہ آبپارہ ، منڈی موڑ اور موٹروے انٹرچینج کو ہاٹ سپاٹ کے طور پر شناخت کیا گیا جہاں زیادہ اخراج پر روزانہ 30 سے ​​40 ٹرک یا بھاری گاڑیوں کے چالان کیے جاتے تھے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ کوویڈ 19 لاک ڈاؤن کے دوران ہوا کا معیار صحت مند ریکارڈ کیا گیا۔ 46 ملین روپے کے بجٹ کے ساتھ ، پاک ای پی اے اپنے تمام آلات کو 24/7 آپریشنل کرنے کو یقینی بنارہی ہے جبکہ آلودگی لوئر اسسمنٹ نیٹ ورک کے اپنے پہلے پروجیکٹ کے تحت چار نئے اور ایک موجودہ مانیٹرنگ اسٹیشن قائم کیا جائے گا۔

انہوں نے مزید کہا ، "اس کے تحت ، ہم وفاقی دارالحکومت میں پانی کی قلت کے اعداد و شمار پر کام کریں گے تاکہ شہر کی مستقبل کی ضروریات کا جائزہ لیا جا سکے۔”

سینیٹر مشاہد حسین سید نے تجویز دی کہ ای پی اے نے وفاقی دارالحکومت کا ریئل ٹائم ایئر کوالٹی انڈیکس (AQI) فراہم کرنے کے لیے اپنی سمارٹ ایپلی کیشن تیار کی ہے۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے وزیر مملکت برائے موسمیاتی تبدیلی زرتاج گل نے کہا کہ حکومت نے وفاقی سطح پر پارلیمنٹ کی قائمہ کمیٹیوں کے ذریعے پلاسٹک کے تھیلوں پر پابندی عائد کر دی ہے جو ماحولیاتی تحفظ کی ہر کوشش میں عمل میں لائی جائے گی۔

انہوں نے مزید بتایا کہ پنجاب میں 4000 سے زائد اینٹوں کے بھٹوں کو فضائی آلودگی کو روکنے کے لیے زیگ زگ ٹیکنالوجی میں تبدیل کر دیا گیا ہے جبکہ اسی ٹیکنالوجی پر اسلام آباد میں بھٹوں کو منتقل کرنے کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اب تک اسلام آباد کے سات بھٹوں کو جدید ٹیکنالوجی میں تبدیل کیا جا چکا ہے۔

مزید یہ کہ سینیٹر تاج حیدر نے کہا کہ فضائی آلودگی کو کم کرنے کے لیے بے ترتیب ٹریفک کو روکنے کی ضرورت ہے کیونکہ یہ زیادہ آلودگی کا باعث بنتا ہے۔

اجلاس میں پیش کردہ گلوبل چینج امپیکٹ سٹڈیز سینٹر ترمیمی بل پر غور کرتے ہوئے سینیٹر شیری رحمان نے اعتراض کیا کہ مرکز کے بورڈ آف گورنرز (بی او جی) میں پارلیمنٹ کی نمائندگی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر انہیں بورڈ میں نمائندگی نہیں دی گئی تو پارلیمنٹ اپنی نگرانی کھو دے گی۔

سیکرٹری برائے موسمیاتی تبدیلی نے بتایا کہ وزارت قانون نے سوچا کہ ایگزیکٹو بورڈ میں پارلیمنٹیرینز کی نمائندگی نہیں ہونی چاہیے جس پر رحمان نے جواب دیا کہ اگر ایسا ہے تو پھر بورڈ کے دیگر تمام اراکین کا کیا ہوگا کیونکہ انہوں نے پارلیمنٹیرین کو لڑا اور شامل کیا چین پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) اور دیگر بورڈز میں

اجلاس میں کمیٹی کے اراکین نے متفقہ طور پر بل میں مزید ترامیم کرنے کا فیصلہ کیا جس کے ذریعے بورڈ دونوں ایوانوں کے ایک ایک رکن کی نمائندگی کرے گا اور بورڈ کا اجلاس ہر تین ماہ بعد بلایا جائے گا۔

کمیٹی کے ارکان نے یہ بھی سفارش کی کہ سینیٹر فیصل جاوید کی جانب سے پیش کیا گیا اور سینیٹ سے منظور شدہ اینٹی لیگیشن بل جلد قومی اسمبلی میں پیش کیا جائے۔

مرکزی ڈیسک

ٹوئن سٹی نیوز پاکستان کے دو بڑے شہروں راولپنڈی اسلام آباد کا مقامی سطح کا ڈیجیٹل نیوز پلیٹ فارم ہے،جو جڑواں شہروں کی مقامی خبروں کے ساتھ راولپنڈی اسلام آباد کا مقامی کلچر، خوبصورتی، ٹیلنٹ اور شخصیات کو سامنے لےکر آتا ہے۔

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button
Open chat
رہنمائی حاصل کریں
السلام علیکم! ہم آپ کی کیسے مدد کر سکتے ہیں؟